غزل

عبدالغفار زاہد شعریات

اپنا یہ جو کچھ حال ہے
سب شامتِ اعمال ہے


سارا جہاں ساری زمیں
اپنے لہو سے لال ہے


کیسے نہ لٹتا قافلہ
رہبر ہی بداعمال ہے


جو فکرِ ملت میں ہے گم
یاں وہ بھی مالا مال ہے


دستار پر مت جائیو
اندر سے دامن لال ہے


دنیا کا مت پوچھو میاں!
بس جی کا اک جنجال ہے


اِس دم بچے، اُس دم پھنسے
اک خواہشوں کا جال ہے


ہنستے ہوئے پایا جسے
اندر سے وہ بے حال ہے


کرتوت تو بدلے نہیں
کہنے کو بدلا سال ہے


اس بھیڑ میں تنہا فقط
اک زاہدِ بد حال ہے


 

1
آپ کے تبصرے

avatar
1 Comment threads
0 Thread replies
0 Followers
 
Most reacted comment
Hottest comment thread
1 Comment authors
Jamal Hakeem Recent comment authors
newest oldest most voted
Jamal Hakeem
Guest
Jamal Hakeem

Rehbar bhi ye humdam bhi ye gum-khvaar humare,
Ustad ye qaumo’n ke hai’n me’amaar humare