عبدالکریم شاد

بے تابیِ جذبات ادھر بھی ہے ادھر بھی

عبدالکریم شاد شعریات

بے تابیِ جذبات ادھر بھی ہے ادھر بھی

پابندیِ حالات ادھر بھی ہے ادھر بھی


محفل میں تغافل کو تغافل نہ سمجھیے

کچھ قیدِ روایات ادھر بھی ہے ادھر بھی


یوں ہی تو نہیں بزم میں ہوتے ہیں اشارے

کوئی نہ کوئی بات ادھر بھی ہے ادھر بھی


مژدہ یہ سنایا ہے مرے دل کی تڑپ نے

“اب شوق ملاقات ادھر بھی ہے ادھر بھی”


فرقت میں بھلے لگتے نہیں چاند ستارے

ویسے تو حسیں رات ادھر بھی ہے ادھر بھی


دیکھیں کہ محبت نے کسے کتنا بھگویا

اس ابر کی برسات ادھر بھی ہے ادھر بھی


تاثیر تو کچھ بھی نہیں باتوں میں کسی کی

ہاں زورِ بیانات ادھر بھی ہے ادھر بھی


کچھ ہوتے دلائل تو کوئی بات بھی بنتی

الزام کی بہتات ادھر بھی ہے ادھر بھی


سنتا ہے بھلا کون مقابل کے جوابات

اک شورِ سوالات ادھر بھی ہے ادھر بھی


گفتار کے آداب کا فقدان ہے لیکن

الفاظ کی بہتات ادھر بھی ہے ادھر بھی


خاموش تماشائی بنے بیٹھے ہیں سب لوگ

اظہار کمالات ادھر بھی ہے ادھر بھی


زندانِ فراق ایسا موافق ہے ہمارے

زنجیرِ خیالات ادھر بھی ہے ادھر بھی


ہم کو یہ گماں تھا کہ سدا شاد رہیں گے

اب شکوۂ حالات ادھر بھی ہے ادھر بھی


آپ کے تبصرے

avatar