ہر لمحہ، ہر آن ہوئے ہم

حاتم اسفرازی شعریات

ہر لمحہ، ہر آن ہوئے ہم

تیرے لیے قربان ہوئے ہم


جب سے تیری قربت پائی

دو قالب اک جان ہوئے ہم


جب بھی آئی یاد تمھاری

رو رو کر ہلکان ہوئے ہم


زخموں کے اب پھول کھلیں گے

کانٹوں کے مہمان ہوئے ہم


کیوں کر تیری فکر ستائے

خود سے جب انجان ہوئے ہم


کوئی رو کر یاد کرے ہے

سن کر یہ حیران ہوئے ہم


مانی ہے ہر بات تمھاری

پھر بھی نافرمان ہوئے ہم؟


حاتم! ایسے تاڑ رہے ہیں

گویا پاکستان ہوئے ہم


1
آپ کے تبصرے

avatar
3000
1 Comment threads
0 Thread replies
0 Followers
 
Most reacted comment
Hottest comment thread
1 Comment authors
Kashif Shakeel Recent comment authors
newest oldest most voted
Kashif Shakeel
Guest
Kashif Shakeel
بہت خوب حاتم بھائی