یہ خواب آنکھوں میں نہ ہوتے تو پھردنیامیں کیاہوتا

فائز بلرامپوری شعریات

یہ خواب آنکھوں میں نہ ہوتے تو پھردنیامیں کیاہوتا

میں اک سوکھےشجرکی شاخ بن کےگرگیاہوتا


میری بے تابی ٔ حسرت کو ہے اک ضبط ِ دل لاحق

وگرنہ شہرمیں ہرروز اک محشر بپا ہوتا


مری کیفیت ِ سوزِ جگر کو مہربان ِ غم

جنوں کہتے اگر ہنگامہ ٔ دل بےنوا ہوتا


تکلف !زندگی میں برطرف کرتے ہوئے جانا

کہ پیہم میں نہ ہوتا گر تکلف آشنا ہوتا


اندھیروں پربھی قابض ہےاجالے بھی اسی کےہیں

کہ ہم بھی روشنی کردیتے گر کوئی دیا ہوتا


مجھےبھی عالم ہستی میں مل جاتی کوئی منزل

جو کوئی ہم نفس ہوتا ،جو کوئی ہم نوا ہوتا


ترا کیا اعتبار اے زندگی! آئے کہ ہم اب تک

پس خاک ِ وطن ہوتے جو تیرا آسرا ہوتا


چلے جاتے اکیلے جانب ِملک ِ عدم فائز

اگربے خانماں رہ رو کا کوئی نقش پا ہوتا

1
آپ کے تبصرے

avatar
3000
1 Comment threads
0 Thread replies
0 Followers
 
Most reacted comment
Hottest comment thread
1 Comment authors
سعد احمد Recent comment authors
newest oldest most voted
سعد احمد
Guest
سعد احمد
اچھا لہجہ